ادھوری ملاقات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور کورونا۔۔۔۔۔۔ !!!

سہیل احمد انصاری
………………………….
ہمارے درمیان اب فاصلہ ہی فاصلہ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ فاصلہ ہی فاصلہ ہے۔۔۔۔
کورونا آیا تو زندگی میں بہت سے لوگوں کی یاد ذہن سے ایسے نکل گئی۔۔۔ جیسے وہ ہم شاید ۔۔۔ مگر اتنا بھی نہیں۔۔۔ لکھنا جو میں جو چاہ رہا ہوں۔۔۔ نہ لکھوں تو زیادہ بہتر ہے ۔۔۔ لیکن راستے میں جو سماجی فاصلہ موجود ہو تو ایسا ہو نہیں سکتا کہ وہ نظر نہ آئے ۔۔۔۔ ذہن سے نکل جائے لیکن آنکھیں ڈھونڈھتی رہتی ہیں۔۔۔ میں اکثر ایک بات کہتا ہوں کہ آپ انسان کو سب سے زیادہ دھوکہ اس کی عقل دیتی ہے۔۔۔ وہ جو سوچتا سمجھتا ہے اکثر ویسا نہیں ہوتا تو اس کا مطلب ہے کہ آپ جو کچھ سوچ سمجھ رہے ہیں وہ آپ کو ویسا نظر آرہا ہے لیکن اصل میں ویسا ہو نہیں رہا۔۔۔ خیر یہ ایک فلسفیانہ بحث ہوسکتی ہے مگر آج کا ہمارا موضوع نہیں۔۔۔۔ کچھ لوگ زندگی میں ایسے ہوتے ہیں جن کے ساتھ جب تک شیئر نہ کیا جائے ہمارے دکھ ہلکے نہیں ہوتے اور خوشیاں نہ بتائی جائیں تو خوشیاں نہیں ہوتیں۔۔۔ اب کیا کیا جائے کہ زندگی میں کورونا آگیا۔۔۔۔۔۔۔۔ لاک ڈاؤن آگیا، سماجی فاصلہ آگیا۔۔۔۔ آمد جامد پر پابندی۔ ملنے ملانے پر پابندی،،، بشیر بدر بہت یاد آئے ۔۔۔۔۔۔
کوئی ہاتھ بھی نہ ملائے گا جو گلے ملوگے تپاک سے
یہ نئے مزاج کا شہر ہے ذرا فاصلے سے ملا کرو
یہ وہ دور ہے جب آپ دیکھیں بھی کسی کو فاصلے سے ۔۔۔ ایسے لوگوں کا کیا کیا جائے کہ جن کو محسوس کرنا بھی ضروری ہے اور ملنا بھی ضروری اور بغیر فاصلے کے۔۔۔ اب کیا کریں۔۔۔ یہ کورنا آگیا۔۔۔۔۔۔۔۔ دوست کیسے بغل گیر ہوسکتے ہیں۔۔ یہ کیسے مصافحہ کیے بغیر رہ سکتے ہیں۔۔۔
کیا کیا جائے فراز کہ وہ کہہ گیا
دوست ہوتا نہیں ہر ہاتھ ملانے والا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب بھلا بتاؤ اب دور پار کیا ایرے غیر نتھو خیرے کیا بلکہ یار دوست بھی ہاتھ ملانے سے گئے۔۔۔۔۔۔۔۔ اگر کوئی غلطی سے ہاتھ ملائے تو ہاتھ ملانے سے پہلے سوچنا پڑتا ہے کہ جیب میں سینیٹائزر بھی ہے یا نہیں؟؟؟؟
اس کی آنکھوں کی نمی، سامنے ہوتے ہوئے دوری کا احساس، ہاتھ نہ ملانے کا قلق، بغل گیر نہ ہونے کا دکھ سب کچھ ہی تو تھا مگر اس سماجی دوری کو دوست ہوکر بھی پاٹ نہیں سکتے تھے۔۔۔ اور کیسے پاٹ سکتے ہیں!!!
اب اسے کیا کہیں اور کیا نہ کہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تقدیر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وبا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یا کچھ اور ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن جو بھی ہے ۔۔۔۔۔۔ ابھی ہم نے قربت میں دوریوں کے بہت سے دکھ سہنے ہیں۔۔۔ بس دعا ہے کہ یہ دکھ زیادہ دن نہ رہیں۔۔۔۔۔ سیانے کہتے ہیں وہ دن نہیں رہے تو یہ بھی نہیں رہیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بالکل اس میں کچھ شک نہیں جس طرح ہر حادثہ ، سانحہ گزرنے کے بعد ایک احساس ، یاد ، چھوڑ جاتا ہے سمجھنے کے لئے یہ دور بھی بہت کچھ چھوڑ جائے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بس دیکھنا یہ ہے کہ اس دکھ بھرے دور سے ہم نکلیں گے تو پتہ چلے گا کہ کس کس کو کہاں چھوڑ آئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس پر الم دور سے گزرنے کے دوران یہ احساس رہے کہ آئندہ پہلے سے زیادہ مضبوط رکھنا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیونکہ بے ربطی کورونا سے بڑا دکھ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ اس لئے اقبال کے بغیر بات ادھوری ہے گی۔۔۔۔۔۔۔۔
فرد قائم ربط ملت سے ہے تنہا کچھ نہیں