عہد یوسفی کیلئے

سہیل احمد انصاری
……………………………

ہر عہد کا تمام ہونا یہ زمانی حقیقت ہے۔۔۔۔۔ ایک کے بعد دوسرے عہد میں جینا ۔۔۔۔۔۔۔ یہ بھی حقیقت ہے۔۔۔۔۔۔۔ لیکن اس جینے اور مرنے میں نہ جانے کتنے جی جان سے گئے اور نہ جانے کتنوں کے جی چھوٹ گئے۔۔۔۔۔۔۔۔ یار لوگوں سے تعزیت کا یارا نہیں۔۔۔۔ محفل یاراں، بزم یاراں۔۔۔۔ یہ سب اس عہد میں ہی تمام ہوگئیں جس عہد میں یہ جوان ہوئیں۔۔۔۔ ہر شخص اپنے عہد کے حصار میں ہوتا ہے۔۔۔۔ لیکن عہد سے باہر نکلنا ہرشخص کا حق ہے لیکن اسے استعمال کوئی کوئی ہی کرسکتا ہے۔۔۔ یہ ہر ایرے غیرے نتھو خیرے کی بس کی بات نہیں۔۔۔ مظاہرات قدرت میں آنسو وہ انمول تحفہ ہیں جنہیں بیان کے لئے الفاظ کی ضرورت کبھی نہیں۔۔ آنسو ہمیشہ نظر آتا ہے اور اس کا نظر آنا اس لمحے کو امر کردیتا ہے۔۔۔۔ کہا جاتا ہے مرد کا ہنسنا بھی عجیب ہے اور رونا بھی عجیب ۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن کچھ لوگ اتنے خوب صورت ہوتے ہیں کہ ان کا ہنسنا جتنا اچھا لگتا ہے ان کا رونا اس سے بھی سوا ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ ہمارا مقصد یہ ہے ہرگز نہیں کہ وہ روتے رہیں ہم تو یہ چاہیں گے وہ ہنستے ہی رہیں۔۔۔۔ یہ بھی درست ہے کہ آنسو بیچنا دنیا کا ارزاں ترین کاروبار ہے۔۔۔۔ مگر اس ارزانی سے گرانی ختم نہیں ہوتی۔ بڑھتی ہے۔۔۔ یہ تو خیر معاش کی بات تھی۔ برمحل آگئی۔۔۔۔۔۔ اسے بے محل ہی پڑھیں تو اچھا ہوگا۔۔۔
جیسے فیض کے ہاں گلشن کا کاروبار۔۔۔۔ عاشقانہ تھا۔۔۔۔ !!!
دوستو!!! آج آپ سب ہی بہت یاد آرہے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وجہ یہ نہیں کہ آپ سے ملاقات نہیں ہوتی بات نہیں ہوتی۔۔۔ مگر ۔۔۔۔ وہ ۔۔۔ بات نہیں ہوتی۔۔۔۔۔۔۔۔ !!!
ہنسی ، مسکراہٹ، تبسم، ان کو معنی پہنانا آسان نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہو بھی نہیں سکتا،،، ہنسنا اکثر غیر سنجیدہ عمل سمجھا جاتا ہے، مسکراہٹ کسی کے لبوں پر کھیلے ۔۔۔۔۔ ناپسندیدہ ذرا کم کم ہی ہوتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہاں تبسم،،،،، ہلکا سا دھیرے ۔۔۔۔۔۔ وہ لبوں کی شان ہوتی ہے ۔۔۔۔ لیکن جس تبسم میں زمانے کا دکھ چھپا ہو۔۔۔۔۔۔۔ جس میں ہجر ، فقر، عیاں نہ ہو۔۔۔۔ اس کو سمجھنے کے لئے کم از کم ہجر ہی نہیں فقر سے بھی گزرنا پڑتا ہے لیکن اس کا ذرا کم کم کو ہی اس کا یارا ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس سب کے لئے پرکھوں کی زمین چھوڑنی پڑتی ہے نئے دیس میں جانا پڑتا ہے۔۔۔ دو صدیوں کا سفرطے کرکے ہی یہ سب کچھ ممکن ہے۔۔۔ محبتوں کے امین اکثر تندخو اور بدمزاج تصور کئے جاتے ہیں اس کی وجہ اکثر ان لوگوں کو بھی نہیں معلوم ہوتی ۔۔۔۔ لیکن اس کی وجہ وسیع تناظر میں یہ کہی جاتی ہے محبتوں کے امین اپنے گرد ایک ہالا ایک حصار، ایک قلعے کی فصیل پر ہوتے ہیں جسے لوگ دیکھ نہیں سکتے ہاں محسوس کرسکتے ہیں لیکن یہ لوگ اس فصیل کا فائدہ اٹھاکر کبھی کبھی کوئی ایسی پھلجڑی اور انار چھوڑ دیتے ہیں جس سے اطراف میں روشنی ہی روشنی اور خوشی ہی خوشی پھیل جاتی ہے لیکن وہ فیصل بالا سے اس دیکھنے کے لئے بجائے کسی نئی منزل کسی نئے نشان اور چراغ کو ڈھونڈھنے نکل پڑتے ہیں۔۔۔۔ یہ جو خوشی دینے کا فرشتہ ہے باہر سے نہیں آتا ۔۔۔۔۔۔۔ اندر ہی کہیں ہوتا ہے اس کا جسم اور روح سے رشتہ اتنا ہی گہرا ہوتا ہے جتنا جسم اور روح کا ۔۔۔۔۔۔۔
کسی کو یاد کرنا اختیاری عمل ہے اس پر قابو کیا جاسکتا ہے۔۔۔ لیکن کسی کا یاد رہنا بےاختیاری عمل ہے اس پر قابو نہ پانا ہی بہتر ہے۔۔۔۔ یہ وہ عمل ہے جب حاصل ہوجائے تو گیان دھیان کی بہت سی منزلیں طے کرکے آدمی خود بھی کہیں سے کہیں پہنچ جاتا ہے۔۔۔۔۔۔۔
کہا جاتا ہے محبوب کو دیکھ لینا محمل اور ہم نشینی ایسے ہی ہے جیسے صحرا میں برسات کی پہلی بوند۔۔۔۔ لیکن لق و دق صحرا میں پہلی بوند آخری نہیں ہونی چاہئے۔۔۔۔ محبوب کو محجوب رکھنا ہی محبوبی کی بلندی ہے لیکن ۔۔۔۔ بس دھیرے دھیرے یاد کرکے ۔۔۔۔۔۔بقول غالب۔۔۔
کاو کاو سخت جانی ہائے تنہائی نہ پوچھ
صبح کرنا شام کا لانا ہے جوئے شیر کا