ہماری نیشن ہڈ کو آزمایا گیا ہے، ڈی جی آئی ایس پی آر

ڈی آئی ایس پی آر میجر جنرل بابر افتخار نے کہا ہے کہ موجودہ چیلنج نے ہماری نیشن ہڈ کو آزمایا ہے لیکن اس بار خطرہ مختلف نوعیت کا ہے۔

انہوں نے کہا کہ آج کی بریفنگ کا مقصد کرونا وائرس کے حوالے سے پاکستان آرمی کے In Aid of Civil Power اقدامات سے آگاہی ہے۔
۔ لیکن سب سے پہلے، آج کے دن کی منابست سے تمام اہلِ وطن اور دُنیا میں جہاں جہاں پاکستانی موجود ہیں۔سب کو یومِ پاکستان مبارک۔
۔ 80 برس قبل آج ہی کے دن ہمارے اِسلاف نے ایک منزل کا تعین کیا اور یکجا ہو کر نا ممکن کو ممکن کر دکھایا۔ ایک ایسا سنگِ میل جو ایک قوم ایک منزل پاکستان بنا۔
۔ آج اُن سب اِکابرین کو خراجِ تحسین پیش کرنے اور یاد کرنے کا دِن ہے۔
۔ ایک آزاد وطن اور دو قومی نظریے کے لئے، جس کی سچائی آج بھی سب پر عیاں ہو رہی ہے۔

۔ آج پھر 23مارچ ہے۔
۔ آج پھر اُن اکابرین کے وارثوں کو ایک نیا چیلنج درپیش ہے۔
۔ ایک ایسی آفت جس نے پوری دُنیا کو اپنی لپیٹ میں لے رکھا ہے۔
۔ حتی کہ ترقی یافتہ ترین ممالکبھیCOVID-19 کے سامنے بے بس نظر آ رہے ہیں۔
۔ 1940، قیام ِ پاکستان مقصد تھا، منزل تھی۔
۔ اب ایک مرتبہ پھر یکجا ہو کر محفوظ پاکستان کے لئے قومی جذبے کی ضرورت ہے۔
۔ آج کا دن کشمیری بہن بھائیوں کو بھی یاد کر نے کا دن ہے۔ جو بدترین ریاستی دہشت گردی اور اس قدرتی آفت کے مقابلے میں بے یارو مددگار ہو نے کے باوجوداپنے حقِ خود ارادیت کے لئے مزاحمت کی مثال بنے ہوئے ہیں۔
۔ مقبوضہ کشمیر کے عوام اس جدوجہد میں ضرور کامیاب ہو نگے۔ انشا اللہ
۔ پاکستان کو اس وقت کرونا وائرس کا شدید چیلنج درپیش ہے۔
۔ یہ حقیقت ہے کہ چیلنجز کا مقابلہ کر کے ہی قومیں Riseکرتی ہیں۔
۔ ان حالات میں عوام کا ریاست پر اعتماد ہی اس صورتحال سے نکلنے میں مدد دے سکتا ہے۔
۔ افواجِ پاکستان اپنی ذمہ داریوں سے بخوبی آگاہ ہیں اور اس سلسلے میں ہر کوشش اور وسائل بروئے کار لائے جارہے ہیں۔
۔ کل شام ایک خصوصی کو ر کمانڈرز کانفرنس میں کرونا وائرس سے نمٹنے کے لیے افواجِ پاکستان کی سول اداروں کی امداد کے لیے تیاری اور Action Plan کا جائزہ لیا گیا۔

۔ حکومت پاکستان نے آئین کے آرٹیکل 245کے تحت افواجِ پاکستان کو In Aid of Civil Power ، Requisition کر لیاہے۔
۔ پاکستان آرمی کی لائن آف کنٹرول اور Western Borderپر بھاری Deploymentکے باوجود آرمی چیف نے تمام Available ٹروپس اور افواجِ پاکستان کے تمام میڈیکل Resources کو ضرورت کے مطابق Deploy کرنے کے احکامات دے دیے ہیں۔
۔ وفاق اور صوبائی حکومتوں کے اقدامات کے تحت صرف Hospitals، Food Stuff Stores، کھانے پینے کی اشیا اور میڈیکل سامان تیار کرنے والی فیکٹریاں اور میڈیکل سٹورز کھلیں رہیں گے۔
۔ تمام سکولز، ہر قسم کے اجتماع پر پابندی ہو گی ۔
۔ تمام قسم کے مالز، ریسٹورنٹ، Cinemas، شادی ہال، Swimming Pools اور غیر ضروری نقل وحرکت پر پابندی ہو گی۔
۔ Inter City صرف Food سپلائے چین کے لئے استعمال کی جائے گی ۔ ہ
۔ شہر وں کے اندر ہر قسم کی Public Transportبند ہو گی۔
۔ تمام ائیر پورٹس انٹرنیشنل فلائٹیس کے لیے 4اپریل تک بند رہیں گے۔
۔ صوبای حکومتوں کے پٹرول پمپس اور منڈیnotified Daysپر کھلیں رہیں گے۔
[23/03, 19:51] Adeel Ahsan Dawn: ۔ اس حوالے سے صوبائی حکومتیں اپنے اپنے صوبے میں گائیڈ لائن جاری کریں گی۔جنہیں سول اداروں کے ساتھ مل کر یقینی بنایا جائے گا۔
۔ تمام حفاظتی اقداما ت کے تحت Borders تو بند کر دیے گئے ہیں لیکن اصل بارڈر انسان اور کرونا وائرس کے درمیان ہے۔ جس پر ہم نے قابو پانا ہے۔
۔ یہ انفرادی، خاندان، کمیونٹی اور معاشرے کے طور پر مشکل اور سخت فیصلوں کا وقت ہے۔
۔ انفرادی نظم و ضبط اور باہمی تعاون تمام اداروں کی کوششوں کو کامیاب کرے گا۔
۔ کرونا وائرس کے خلافBest Defenceآئسولیشن سے زیادہ Cooperationہے۔
The task at hand is enormous and difficult
۔ لیکن دُنیا نے2005کے زلزلے، 2010کےFloods اور دہشت گردی کے خلاف جنگ میں اس قوم کی Resilience کو دیکھا ہے۔
۔ موجودہ چیلنج نے ایک مرتبہ پھر ہماری Nationhood کو آزمایا ہے۔ لیکن اس مرتبہ خطرہ مختلف نوعیت کا ہے ۔
The likes of which we have not seen in our Life Time
۔ اس خطرے پر قابو پانے کے لئے افواجِ پاکستان قوم کے شانہ بشانہ کھڑی ہو نگیں۔
۔ World Best Practices کو مدِ نظر رکھتے ہوئے اپنی نقل وحرکت کو محدود رکھنا ہی موثر ترین بچاؤ ہے لیکن اس کے ساتھ ساتھ سکریننگ، ٹیسٹنگ اور Contact Tracing بھی بہت اہم ہیں۔
۔ اس سلسلے میں افواجِ پاکستان دیگر اداروں کے ساتھ مل کر تمام انٹری پوائنٹس پر اس Procedureکو یقینی بنا رہے ہیں۔
۔ اب تک 1ملین سے زائد مسافروں کی سکریننگ Ensureکی گئی ہے۔
۔ پچھلے 24گھنٹوں میں 12ہزار سے زائد سکریننگ ٹیسٹ کئے گئے ہیں۔
۔ ملک بھر میں قائم کئے Quarantine Campsمیں سیکورٹی اور دیگر حفاظتی اقدامات کو یقینی بنایا جا رہا ہے۔
۔ مجھے اس میں کوئی شک نہیں کہ بہادر اور غیور پاکستانی قوم ایک مرتبہ پھر افواجِ پاکستان کے ساتھ مل کر اس چیلنج کو بھی عبور کر لیں گے۔آرمی چیف نے اپنی ایک ماہ کی تنخواہ، بریگیڈئرز سے لیفٹیننٹ جنرل تک 3دن، کرنل تک کے عہدے کے آفیسرز نے2دن اور سولجرز اورجے سی اوز نے اپنی ایک دن کی تنخواہ اس وَبا سے نمٹنے کے لئے قائم کیے گئے ایمرجنسی فنڈ میں دینے کا فیصلہ کیا ہے۔
۔ آخر میں آپ سب سے کہوں گا کہ اپنی، اپنے خاندان اور خاص طور پر اپنے بزرگوں کی صحت کی حفاظت کے لئے حکومتِ پاکستان، وزارتِ صحت اور ڈاکٹرز کی جانب سے جو ہدایات دِی جا رہی ہیں اُن پر ذمہ دار شہری کے طور پر بھرپور عمل کریں۔ خود کو اور اپنے پیاروں کو گھروں تک محدود رکھیں تاکہ ہم اس وبا کا مقابلہ کر سکیں۔
۔ ان ہدایات پر عمل کر کے ہی Panicاور خوف وہراس سے بچا جا سکتا ہے۔
۔ انفرادی حفاظت میں ہی اجتمای حفاظت ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں