ذوق نخچیری

سہیل احمد انصاری
…………………………………

جب شعر سننے کا دور تھا تب استاد شعرا کی شاعری مشاعروں میں سنتے تھے تو کیا مزہ ہوتا تھا۔۔۔۔ آج تابش دہلوی کا ساکنان کراچی کے عالمی مشاعرے میں سنایا ہوا یہ شعر بے طرح یاد آرہا ہے۔۔۔۔
نادیدہ منظروں کو اگر دیکھنا چاہیں
اپنی ہی ذات سے کوئی پردہ اٹھایئے۔۔۔
اس بے پردگی کے دور میں ایسا باپردہ شعر مرحوم تابش دہلوی کا ہی ہوسکتا ہے۔۔۔۔ کیا خوب اور حالات حاضرہ کا ترجمان شعر ہے ۔۔۔ لیکن یہ حالات اس دور میں تو تھے ہی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن یہ حالات اس دور میں ہی بھی ہیں۔۔۔ سیاست پر علامہ اقبال کا ایک شعر بھی یاد آرہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بیچارہ پیادہ تو ہے اک مہرۂ ناچیز
فرزیں سے بھی پوشیدہ ہے شاطر کا ارادہ
شطرنج کی چالیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بساط سے زیادہ ۔۔۔۔ سیاست میں زیادہ استعمال ہوتی ہیں۔۔۔ اور بسا اوقات شطرنج سے ہی سیاست کی چالیں نکالی جاتی ہیں۔۔۔
ہماری گفتگو کرنے کا مقصد یہاں شعر و شاعری ہی تھا لیکن دھیان نہ جانے کیوں ۔۔۔۔۔۔
سیاست ، اور نہ جانے دھیان کہاں سے کہاں چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جب حالات میں جمود آئے تو تغیر ضروری ہوجاتا ہے۔۔۔ لیکن یہ تغیر۔۔۔۔۔۔۔۔ غیر سے آئے تو اچھا نہیں ہوتا ۔۔۔۔۔۔۔ جولائی کا مہینہ آدھا گزر گیا ہے۔۔۔۔ ایک مہینے میں یوم جشن آزادی بھی آجائے گا۔۔۔۔ اس کے کچھ روز بعد پاکستان کے پہلے گورنر جنرل قائداعظم محمد علی جناح کا یوم وفات بھی آ جائے گا۔۔۔۔
ہمارے بہت سے قومی سانحے، المیے کا روپ دھار چکے ہیں۔۔۔ ہم ان سے کچھ نہیں سیکھا۔۔۔۔ ہم سیکھ بھی کیسے سکتے ہیں۔۔۔ ہم نے سیکھنا چھوڑ کر سکھانا شروع کردیا۔۔۔ یقین نہ آئے تو بلدیاتی یوسی کونسلر سے ملک کی ترقی کا راز معلوم کرلیں۔۔۔۔ وہ ایسے بتادے گا کہ آپ کو یقین نہیں آئے گا اور جب گلیوں کی صورت حال پر روشنی ڈال کر پوچھا جائے یہ کب ٹھیک ہوں گی تو ایسا لامتناہی سلسلہ بتائے گا تو آپ یقین ہوجائے گا کہ بیچارہ مسکین معصوم ہے۔۔۔
ہماری سیاست ، ذہانت ، ذکاوت۔۔۔ یہ چیزیں غیرکی مرہون منت کیوں ہیں۔۔۔ ہم اپنی سیاست کو دوسروں کے کندھوں پر کیوں چلانے کے قائل ہیں۔۔۔۔ پردہ رہ جائے تو اچھا ہے۔۔۔۔ نہ جانے کیوں ہماری سیاست کے حوالے سے یہ بات ہمارے ذہن سے نہیں نکلتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ بھی علامہ اقبال ہی اس کی تفسیر کرسکتے ہیں بس ایک مصرعے میں
کہ خود نخچیر کے دل میں ہو پیدا ذوقِ نخچیری

اپنا تبصرہ بھیجیں