ہم نے ایک کہانی سنائی!!!

سہیل احمد انصاری
…………………………..

جنگل میں بندر آرام سے رہ رہا تھا۔۔۔۔ کھانے کے لئے کیا نہیں تھا۔۔۔۔۔ سب کچھ تو تھا۔۔۔۔۔۔ بیر،،،،،،،
انناس،،،،،،،،،،، نہ جانے کتنی قسم کے پھل اور میوہ جات تھے جو بندر کو دستیاب تھے۔۔۔۔۔۔۔ لیکن جیسے کہا جاتا ہے کہ جب سب کچھ میسر ہو تو ناشکری آہی جاتی ہے تو بندر کی کھال بھی مصالحہ مانگنے لگی۔۔۔ اور اس نے کیا شہر کا رخ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یاد رہے کہ اس کی موت نہیں آئی تھی اور گیدڑ نہیں تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تو اس لئے بچ گیا۔۔۔۔۔
دوسری طرف۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مداری کی بندریا مرگئی تھی اور بندر اس کی یاد میں دیوانہ ہوگیا تھا۔۔۔۔۔ وہ بے روزگار ہوگیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پیٹ کی آگ نے ستایا تو اس نے سوچا کہ اب ایسا کرتا ہوں کہ بندر اور بندریا کے جوڑے کے بجائے اکیلا بندر لاتا ہوں تاکہ آئندہ بندریا کے مرنے پر بندر پاگل نہ ہوجائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس نے یہ سوچ کر جنگل کا رخ کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ راستے میں اسے بندر مل گیا۔۔ اسے دیکھ کر اس کی بانچھیں کھل گئیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن بندر سیانا تھااسے دیکھتے ہی درخت پر چڑھ کر خوخیانے لگا۔۔۔۔۔۔
مداری وہاں بیٹھ کر سوچنے لگا کہ یہ اس طرح نہیں مانے گا مداری پرانا شکاری تھا۔۔۔۔۔۔ جیب میں کچھ مونگ پھلیاں بادام پڑے تھے انہیں بندر کی طرف اچھال کر یہ کہہ کر چل دیا تمہیں اچھے لگیں تو کھالے نا ورنہ کسی کو دے دینا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ساتھ ہی ہانک لگائی کل پھر آؤں گا۔۔۔۔۔۔۔ مداری کے جانے کے بعد بندر نیچے آیا اور بادام اور مونگ پھلی چکھی۔۔۔۔۔۔ واقعی مزے کی تھی اور یہ مزہ اسے پہلی دفعہ مل رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔ بس کیا تھا کھاتا ہی چلا گیا۔۔۔۔۔۔ جب سب دانے ختم ہوگئے تو جنگل کی طرف چل پڑا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جنگل پہنچ کر بھی وہ مزے کی مونگ پھلی اور بادام کا ذائقہ یاد کرتا رہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مونگ پھلی اور بادام کے ذائقے کو یاد کرتے کرتے وہ سوگیا۔۔۔۔۔ صبح اٹھا تو بھوک ستائی۔۔۔۔۔ مونگ پھلی اور بادام بھی یاد آئے۔۔۔۔۔۔۔ سوچا چلو پھر شہر جانے والے راستے کی طرف چلتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہوسکتا ہے کل جو اجنبی آدمی نے کہا تھا آج پھر آئے گا شاید وہ پھر آجائے۔۔۔۔۔۔۔ اسی خیال سے وہ شہر کی طرف چل پڑا۔۔۔۔۔۔۔ مداری نے جو کل دام لگایا تھا۔۔۔ آج پھر وہی دام اور ساتھ میں کچھ پستے بھی لے کر جنگل کے راستے کی طرف چلا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قسمت دیکھئے عین جنگل کے کنارے پر مداری اور بندر کا آمنا سامنا ہوگیا۔۔۔۔ دونوں کی بانچھیں کھل گئیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مداری نے جلدی سے جیب سے مونگ پھلی بادام اور پستے نکالے اور ہوا میں اچھال کر بولا۔۔۔۔۔۔ کھاؤ میری جان۔۔۔۔۔ اور کچھ دور ہٹ کر زمین پر بیٹھ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔ بندر جلدی سے درخت سے نیچے اترا اور آج کے دام کے مزے لینے لگا۔۔۔۔۔ جب ناشتہ کرکے فارغ ہوا تو دیکھا مداری اسے بڑے پیار سے دیکھ رہا ہے۔۔۔ بندر نے سوچا یقینا یہ میرا دوست ہے اور پھر اس کے پاس جاکر ناچنے لگا۔۔۔۔۔۔ مداری ہوشیار تھا ہلکے ہلکے پیار کرکے یہ کہہ کر چلاگیا کہ میں کل نہیں آؤں گا گھر میں کچھ کام ہے۔۔۔۔۔۔ اگر تمہیں بھوک لگے تو سامنے والے محلے میں کسی سے بھی پوچھ لینا وہ میرا گھر بتادے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اب بندر اور مداری دونوں خوش تھے دونوں سمجھ رہے تھے کہ ان کے دن پھر گئے ہیں۔۔۔ اگلے دن بندرصبح سویرے اٹھا اور سیدھا شہر کی طرف لپکا اور مداری کے بتائے ہوئے پتے پہنچ گیا۔۔۔۔۔۔۔ اور دیوار پھانک کر سیدھا مداری کے گھر میں داخل ہوگیا۔۔۔۔۔ دیکھا مداری بڑے مزے سے چارپائی پر سو رہا ہے۔۔۔ بندر اس کی چارپائی پر پہنچ کر اس کے بال سنوارنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔ ایسے میں مداری کی آنکھ کھل گئی۔۔۔۔۔۔ مداری کو یقین ہوگیا کہ اس کی قسمت جاگ گئی ہے بلاقیمت بندر اس کے ہاتھ آگیا ہے۔۔۔۔ بڑے مزے سے مونگ پھلیاں، بادام اور پستے اسے کھلانے لگا۔۔۔ بندر اس کی گود میں بیٹھ کر سر جھکائے میوے کھارہا تھا کہ اچانک اسے اپنی گردن کچھ بھاری لگی اور ساتھ ساتھ چھن چھن کی آواز بھی سنائی دینے لگی۔۔۔ جناب مداری نے بڑی ہوشیاری سے گھنگھروؤں کا پٹہ بندر کے گلے میں ڈال دیا تھا ۔۔۔ یوں مفت کا بندر مداری کے ہاتھ آگیا اور مداری کے لئے روزی روٹی کا دوبارہ سے بندوبست ہوگیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جناب عالی۔۔۔۔۔ ایک ضروری وضاحت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس کہانی کا کسی سے کوئی تعلق نہیں ۔۔۔۔۔ لاک ڈاؤن ہے،،،، وبا پھیلی ہوئی ہے ۔۔۔۔ ایسے میں رات کو جب بچے ضد کرتے ہیں تو ہم ایسی ہی الٹی سیدھی کہانیاں گھڑ کر بچوں کو سنادیتے ہیں اور پھر بچے خوش ہوجاتے ہیں اس سے ہماری بچوں کی دوستی بھی مستحکم ہورہی ہے اور گھر کا ماحول بھی اچھا ہورہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔)

Type a message

اپنا تبصرہ بھیجیں